Ankhain Poetry in Urdu | Aankhen Poetry in Urdu 2 lines sms | By sadpoetryurdu

 Ankhain Poetry in Urdu

ankhain poetry in urdu
aankhen poetry in urdu 2 lines sms

ankhain poetry in urdu: our time find the best eyes poetry in urdu and ankhain shayari.aankhen poetry in urdu 2 lines sms

آ کے دیکھے جو کسی صبح وہ تکیہ 

میرا جو سمجھتا ہے مجھے رونا نہیں آتا

_____________________________________________________

aakay dekhy jo kisi din oh takya

Mer jo semjhta hai mujha rona nhi ata





ankhain poetry in urdu
aankhen poetry in urdu 2 lines sms




جزبات کے ہر بَاب کا عُنوان ہیں آنکھیں 

غالب کی غـَـزل میر کی دیوان ہیں آنکھیں

_____________________________________________________

jazbat k hr baap ka unwan hai ankhain

ghalib ki ghazal Mer ki dewan hai ankhain


aankhen poetry in urdu 2 lines sms

aankhen poetry in urdu 2 lines sms
                        aankhen poetry in urdu 



خدا بچائے تری مست مست آنکھوں سے

فرشتہ ہو تو بہک جائے آدمی کیا ہے

_____________________________________________________

khuda bachya tere mast mast akhiyan sa

farishta hun to bhak jaya aadmi kya hai

gulab ankhen sharab ankhen ghazal in urdu



‏یہ تیرا رُخ نہیں , سانچہ ہے میری آنکھوں کا

یہ میری شَے ہے , مجھے اس پہ پیار آنے دے!!

__________________________________

ya tera rokh nhi sancha hai meri ankhaon ka  

ya meri shah hai mujhy is py payar any dy   

_____________________________________________________

اس کو دیکھ لیتی تھی تو بھوک مٹ جاتی تھی

 میری آنکھوں کا رزق تھا میرے یار کا چہ

__________________________________


is ko dekha latee the to bhok mit jaatee thee
meree ankhon ka rika thee mera yaar ka chehara

_____________________________________________________

تم میری آنکھ کے تیور نہ بھلا پاؤگے

ان کہی بات کوسمجھوگے تویاد آؤں گا۔


udas aankhen urdu poetry



بڑے وثوق، دلیلوں کے ساتھ کرتی ہے

زباں دراز وہ آنکھوں سے بات کرتی ہے


_____________________________________________________

انکار سا کر دیا آنسوں نے آنکھوں میں آنے سے پہلے 
کہ کیوں گراتے ہو ہمیں اتنا اک گرے ہوئے شخص کی خاطر

_____________________________________________________


جب بھی روئے تو آنسو چھپا کر روئے

ہم نے سیکھا ہی نہیں غم کی نمائش کرنا

_____________________________________________________

رو لینے دو آج مجھے جی بھر کر
 شاید کہ
ان آنسوٶں کا اس پے کوئی اثر ہو جاۓ

ankhain poetry


ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے